1. مواد پر جائیں
  2. مینیو پر جائیں
  3. ڈی ڈبلیو کی مزید سائٹس دیکھیں

حکومتی ترقیاتی منصوبے سب کے لیے یا صرف اتحادیوں پر نوازشات؟

10 جون 2023

آئندہ مالی سال کے بجٹ میں سرکاری ترقیاتی منصوبوں کی اکثریت پی ڈی ایم میں شامل جماعتوں کے لیے مختص کیے جانے پر تنقید کی جارہی ہے۔ حکومت کا کہنا ہے کہ اس نے ترقیاتی منصوبوں میں سب کے لیے یکساں مواقع فراہم کیے ہیں۔

https://p.dw.com/p/4SQHH
Pakistan | Mian Muhammad Shahbaz Sharif
تصویر: Akhtar Soomro/REUTERS

پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کی حکومت نے آئندہ مالی سال کے بجٹ میں پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام ( پی ایس ڈی پی) کے زیادہ تر منصوبے مبینہ طور پر حکمران اتحاد میں شامل جماعتوں کی فرمائش پر رکھے ہیں، اس صورتحال پر حکومت کے مخالفین کھل کر تنقید کر رہے ہیں۔

الیکشن میں تاخیر کی بات کرنا غیر آئینی نہیں، اسحاق ڈار

Pakistan | Finanzminister Ishaq Dar
وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈارتصویر: Aamir Qureshi/AFP/Getty Images

 اتحادی حکومت نے کل بروز جمعہ جب مالی سال دوہزار تئیس چوبیس کے لئے بجٹ پیش کیا  تو اس میں گیارہ سو پچاس ارب روپے سوشل سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام کے لیے مختص کئے۔ ناقدین کا کہنا ہے کہ اس خطیر رقم کے لئے بہت سارے پراجیکٹس اتحادی جماعتوں کی فرمائشوں پر رکھے گئے ہیں۔

پاکستان کا نئے مالی سال کے لیے بجٹ، تعریف بھی اور تنقید بھی

 ان فرمائشوں کے حوالے سے بہت سارے اعتراضات اور سوالات اٹھائے جا رہے ہیں۔ کچھ حلقوں میں یہ بحث بھی جاری ہے کہ انتخابات بہت زیادہ دور نہیں تو اتنی خطیر رقم کے منصوبے کس طرح پایا تکمیل تک پہنچائے جائیں گے۔

اتحادیوں پر نوازشات

 انگریزی روزنامے ایکسپریس ٹریبیون کی ایک رپورٹ کے مطابق پی ایس ڈی پی کے لیے مختص کردہ رقم کا ایک بڑا حصہ اتحادی جماعتوں کے اراکین اسمبلی کے حلقوں میں ترقیاتی منصوبوں پر لگے گا۔

پاکستان: معاشی اور سیاسی بحران کے درمیان آج سالانہ بجٹ پیش

 جب ڈی ڈبلیو نے اس حوالے سے جماعت اسلامی پاکستان  کے رکن قومی اسمبلی عبدالاکبر چترالی سے دریافت کیا، تو ان کا کہنا تھا، ''اس بات میں کوئی شک نہیں کہ زیادہ تر پراجیکٹس اتحادی اراکین اسمبلی کی فرمائش پر ترتیب دیے گئے ہیں اور ان پراجیکٹس کو نظر انداز کیا گیا ہے، جو برسوں سے چل رہے ہیں۔  چترال میں چار سٹرکوں کی تعمیر کے لئے نو ارب روپے مختص کیے گئے ہیں لیکن یہ ایک پرانا پراجیکٹ ہے۔‘‘

عبدالاکبر چترالی کے مطابق حکومت نے مالی سال دوہزار تئیس چوبیس کے لئے اتحادی جماعتوں کے اراکین سے ان کی ترجیحات کے بارے میں پوچھا تھا۔ '' لیکن ہم سے اس حوالے سے کچھ دریافت نہیں کیا گیا ہے اور نہ ہی ہمیں کسی پراجیکٹ کی پیشکش کی گئی۔‘‘

Überschwemmungen in Pakistan
پی ایس ڈی پی اسکیموں کے تحت، جو ترقایتی بجٹ مختص کیا جاتا ہے، اس کا مقصد پارلیمنٹیرینز کو ان کے حلقوں میں عوامی فلاح کے منصوبوں کے لیے فنڈز کی فراہمی ہےتصویر: ZUMA Press Wire/picture alliance

حکومتی پھرتیاں

خیال کیا جاتا ہے کہ حکومت نے اس حوالے سے جلد بازی سے کام لیا  اور بجٹ سے صرف چند دن پہلے اپنی اتحادی اراکین اسملبی سے مختلف اسکیموں کے حوالے سے تجاویز جمع کرانے کا کہا۔ ایم کیو ایم سے تعلق رکھنے والی رکن قومی اسمبلی کشور زہرا نے اس حوالے سے ڈی ڈبلیو کو بتایا، ''ہمیں بجٹ سے کچھ دنوں پہلے کہا گیا کہ آپ فوری طور پر ترقیاتی پروگرام کے لئے اسکیمیں تجویز کریں۔ میں نے یہ بھی سنا ہے کہ ایک رکن اسمبلی کو کم از کم پچھتر کروڑ روپے دیے جا رہے ہیں تاکہ وہ انہیں ترقیاتی کاموں کے لیے استعمال کر سکیں۔‘‘

پاکستان پیپلز پارٹی، اسٹیبلشمنٹ کا نیا انتخاب؟

کشور زہرہ کے مطابق  پاکستان میں افسر شاہی کے کاموں میں کافی تاخیر ہوتی ہے او بقول ان کے ایسے میں سوال پیدا ہوتا ہے کہ اگر  ''  ان منصوبوں کے لیے اگر پیسے مل بھی جائیں تو ان پر عملدرآمد کیسے ہو گا۔ پی سی ون اور پی سی ٹو بننے میں کافی وقت درکار ہوتا ہے۔ حکومت کے کئی ادارے اس میں ملوث ہوتے ہیں  اور کئی سیکریٹریز اور افسران سے منظوری لینی پڑتی ہے۔ تو مجھے نہیں لگتا کہ یہ پروجیکٹس اتنی جلدی مکمل ہو جائیں گے۔‘‘

Supreme Court of Pakistan in Islamabad
پاکستانی سپریم کورٹ ایسی درخواستوں کی ماضی میں کئی بار سماعت کر چکی ہے، جن میں حکومت پر الیکشن سے قبل سرکاری وسائل کو اپنے مفاد کے لیے استعمال کرنے کے الزامات لگائے گئےتصویر: Anjum Naveed/AP/picture alliance

 انتخابات کے قریب ترقیاتی پروگرام

 ناقدین کا خیال ہے کہ ماضی میں ایسی مثالیں موجود ہیں، جہاں سپریم کورٹ اور الیکشن کمیشن آف پاکستان نے حکومت وقت پر یہ بات واضح کی کہ وہ انتخابات کے قریب کسی بھی طرح کے ترقیاتی کام نہیں کرا سکتی کیونکہ اس سے یہ تاثر جاتا ہے کہ حکومت رائے دہندگان پر اثر انداز ہورہی ہے۔  

انتخابی قوانین سے واقفیت رکھنے والے ماہرین کے مطابق اگر حکومت ایسا کوئی پراجیکٹ شروع کرتی ہے، تو اسے رکوایا جا سکتا ہے۔

 الیکشن کمیشن آف پاکستان کے سابق سیکرٹری کنور دلشاد کا کہنا ہے کہ کمیشن کو اس حوالے سے اختیارات حاصل ہیں۔ انہوں نے ڈی ڈبلیو کو بتایا، ''یہ بجٹ ابھی پیش کیا گیا ہے۔ پہلی جولائی سے یہ نافذ ہوگا اور یکم اگست کو اس پر عمل درآمد ہونا شروع ہو جائے گا۔ یکم اگست کے بعد انتخابات بہت قریب ہوں گے اور ایسی صورت میں الیکشن کمیشن آف پاکستان کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ اس طرح کے ترقیاتی پراجیکٹس کو رکوا دے اور پھر الیکشن کے بعد ان پر کام کی اجازت دے۔‘‘

کنور دلشار کے مطابق ، ''اس کے علاوہ سپریم کورٹ بھی اس طرح کا کوئی قدم اٹھا سکتی ہے اورماضی میں ایسی مثالیں بھی موجود ہیں۔‘‘

  اس حوالے سے ڈی ڈبلیو نے جب وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی احسن اقبال سے رابطہ کیا تو انہوں نے اس خبر کی تردید کی۔ تاہم انہوں نے اس حوالے سے ڈی ڈبلیو کے دوسرے سوالات کے جوابات نہیں دیے۔

بلوچستان کو سی پیک میں بھی نظر انداز کیا گیا، ڈاکٹر مالک

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ سیکشن پر جائیں

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ

بھارتی کشمیر میں سکیورٹی فورسز کا پہرہ
ڈی ڈبلیو کی مزید رپورٹیں سیکشن پر جائیں
ہوم پیج پر جائیں